Pakeeza Aurtein Best islamic Informative article by Mehwish Siddique

Pakeeza Aurtein Best islamic Informative article by Mehwish Siddique

پاکیزہ عورتیں

اکثر دیکھنے میں آیا ہے

“جب ہم راہ دیتے ہیں تبھی کوئی گزرتا ہے۔

“کوئی آپ کے بارے میں الٹا سیدھا سوچے بھی تو اس کے قدم وہیں روک دیں۔ایمان کی لذت اگر محسوس کرنی ہے تو سب سے پہلے اپنی نظروں کی حفاظت کرنی ہو گی۔

وہ تمام راہ بند کرنے ہوں گے جس کی وجہ سے آپ اپنے راہ سے بھٹک سکتے ہیں۔گمراہ ہو سکتے ہیں۔بطور عورت اپنی حدود کو یاد رکھنا ہو گا۔شرم و حیا کا پردہ کبھی گرنے مت دیں۔

محارم اور غیر محارم رشتوں میں فرق کرنا سیکھنا ہو گا۔جتنی زیادہ خود کی حفاظت کریں گی اتنی زیادہ آپکے ایمان کی حفاظت ہو گی۔حیا اور ایمان کا بہت گہرا تعلق ہے جتنی حیا ہو گی اتنا ہی پختہ ہمارا ایمان ہو گا۔

سورہ النور میں ارشاد باری تعالٰی ہے:

اَلۡخَبِیۡثٰتُ لِلۡخَبِیۡثِیۡنَ وَ الۡخَبِیۡثُوۡنَ لِلۡخَبِیۡثٰتِ ۚ وَ الطَّیِّبٰتُ لِلطَّیِّبِیۡنَ وَ الطَّیِّبُوۡنَ لِلطَّیِّبٰتِ ۚ اُولٰٓئِکَ مُبَرَّءُوۡنَ مِمَّا یَقُوۡلُوۡنَ ؕ لَہُمۡ مَّغۡفِرَۃٌ وَّ رِزۡقٌ کَرِیۡمٌ ۔

ترجمہ:

“خبیث عورتیں خبیث مردوں کے لائق ہیں اور خبیث مرد خبیث عورتوں کے لائق ہیں اور پاک عورتیں پاک مردوں کے لائق ہیں اور پاک مرد پاک عورتوں کے لائق ہیں ۔ایسے پاک لوگوں کے متعلق جو کچھ بکواس ( بہتان باز ) کر رہے ہیں وہ ان سے بالکل بری ہیں ان کے لئے بخشش ہے اور عزت والی روزی ۔”

اگر آپ بھی بطور شوہر پاکیزہ مرد دیکھنے کی خواہشمند ہیں تو اپنے دامن کو جتنا ممکن ہو سکے پاک ہی رکھیں۔اللہ تعالٰی تمام بیٹیوں کی عصمت کی حفاظت کرے۔خود پر نامحرم سے تعلق نبھانے کا داغ کبھی مت لگنے دیں۔

داغ دار بیٹیاں ماں باپ کے سینے پر بوجھ کے علاوہ کچھ نہیں ہوتیں۔جس کیلئے آپ اپنی عزت کو داؤ پر لگاتے ہیں کل کو یہی آپ کو آپ کے اس عمل پر طعنے دیا کریں گے۔آپ پر اعتبار نہیں کیا جائے گا۔

وہ سوچیں گے اگر یہ مجھ سے ایسا تعلق قائم کر سکتی ہے تو نجانے اور کتنوں کے ساتھ یہی سب کیا ہو گا تب کیا کریں گی آپ؟کبھی سوچا ہے؟

خدارا!اپنی عزت کو یوں پاؤں تلے مت روندیں۔اللہ نے آپ کو بہت نایاب بنایا ہے۔آپ بہت قیمتی ہیں۔خود کو بےمول مت ہونے دیں۔بات کرتے ہوئے اپنے حقوق و فرائض کو ہمیشہ یاد رکھیں۔

اللہ پر پختہ ایمان رکھیں اگر آپکی نیت میں کوئی کھوٹ نہیں ہے تو وہ آپ کے ساتھ کچھ بھی غلط نہیں ہونے دے گا۔وہ آپکی من مرضی اور بہتری دونوں کو دیکھتے ہوئے فیصلہ کرتا ہے۔

اسکی رضا میں ہی ہماری بہتری ہے۔وہ حکیم ہے۔حکمت پر مبنی فیصلے کرتا ہے۔

اللہ تعالٰی ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔آمین ثم آمین۔مجھے اپنی دعاؤں میں یاد رکھیں۔

جزاکم اللہ خیرا۔

ازقلم:مہوش صدیق

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Verified by MonsterInsights